آزادکشمیر میں سکیل اپگریڈیشن معمہ بن گیا، اساتذہ کرام سراپہ احتجاج

ایکشن کمیٹی سکول ٹیچرز آرگنائزیشن کے زیر اہتمام مرکزی اجلاس گورنمنٹ بوائز ہائی سکول زرعی فارم 6th روڈ راولپنڈی میں منعقد ہوا۔ جس میں ازادکشمیر بھر اضلاع کی ایکشن کمیٹیز، ورکنگ اور آرگنائزنگ کمیٹیز نے شرکت کی۔ مِتنگ میں سکول ٹیچرز آرگنائزیشن کی طرف سے ڈویژنل صدر مظفرآباد ڈویژن راجہ ذائد خان، ڈویژنل نائب صدر مظفرآباد ڈویژن فیاض افسر عثمانی،ضلع مظفرآباد کے صدر نثار اعوان اور علی گوہر عباسی نے شرکت کی۔ میٹنگ میں مندرجہ ذیل مطالبات اور فیصلہ جات کیے گئے۔

1۔ تمام اضلاع کے اساتذہ نے ٹیچرز ایکشن کمیٹی پر بھرپور اعتماد کیا

2۔ اجلاس میں ٹیچرز آرگنائزیشن کےنمائندگان سے مطالبہ کیا گیا کہ مرکزی صدر سردار سجاد صاحب سےفی الفور مجلس عاملہ کا اجلاس بلا کر سکیل اپگریڈیشن کے حوالے سے اپنے موقف واضح اور ٹیچرز آرگنائزیشن کے الیکشن شیڈول کے اعلان کا مطالبہ کریں اور اس کام کے لیے مرکزی قیادت پر بھرپور انداز میں پریشر ڈالا جائے تاکہ اساتذہ کو الیکشن کے ذریعے ایک نڈر بے باک اور باہمت قیادت مل سکے جو اساتذہ کے مسائل کو حقیقی معنوں میں حل کروائے۔

4۔ اجلاس میں ایکشن کمیٹی کی مرکزی باڈی مکمل کرنے کے لیے میرپور اور پونچھ ڈویژن سے اساتذہ کو شامل کیا گیا۔

5۔ اجلاس میں طے کیا گیا کہ ایکشن کمیٹی سکیلز اپگریڈیشن ، پروموشن کوٹہ اور دیگر مسائل کے حل کے متعلق حکومت سے مذاکرات کرے گئی۔

6۔ اجلاس میں طے سکیل اپگریڈیشن مومنٹ کو مزید فعال اور موثر بنانے کے ساتھ ساتھ حکومت پر دباو ڈالنے کے لیے پہلے ضلعی اور پھر مرکزی سطح پر احتجاج کیا جائے گا۔

7۔ اجلاس میں طے پایا کہ احتجاجی تحریک کو موثر بنانے کے لیے اساتذہ کی صفحوں میں اتحاد قائم کیا جائے گا اور بھرپور روابط کیے جائیں گے۔

8۔ اجلاس میں یہ طہ کیا گیا کہ ایکشن کمیٹی نہ ہی کسی خاص پینل کی نمائندگی کرے گئی اور نہ ہی کسی اور کو ایکشن کمیٹیز کے پروگرامات میں ایسا کرنے کی اجازت دے گئی۔

9۔ اجلاس میں طر پایا کہ ٹیچرز آرگنائزیشن کے الیکشن شیڈول کے سامنے آنے کے بعد ایکشن کمیٹی کی مرکزی باڈی ختم ہو جائے اور اساتذہ کو اپنی مرضی کے مطابق الیکشن میں حصہ لینے کا حق ہو گا۔