آزادکشمیر اساتذہ کرام کی کثیر تعداد سراپہ ِ احتجاج

آزادکشمیر اساتذہ کرام کی کثیر تعداد سراپہ ِ احتجاج
سکیل اپگریڈیشن کی تحریک زور پکڑ گئی

آزاد کشمیر اگرچہ شرح خوادنگی کے لحاظ سے ملک بھر میں صفِ اول میں ہے لیکن حکومت اور محکمہ تعلیم کی پالیسیوں کی وجہ سے اساتذہ کرام ذہنی کشمکش کی کیفیت سے دوچار ہیں۔ اس کی سب سے بڑی وجہ سکیل اپ گریڈیشن کا معاملہ ہے۔

آزاد کشمیر میں چند اساتذہ کرام سے جب ہم نے رابطہ کیا تو ان کا کہنا تھا کہ ہمارے ساتھ حکومت سراسر زیادتی کر رہی ہے ریاست بھر میں پرائمری اساتذہ اسکیل 7 اور جونیئر اسکیل 9،سینیر 16 میں جبکہ باقی صوبوں اور گلگت بلتستان میں پرائمری کا اسکیل 14 جونیئر کا 16 اور سینیر کا 17 سکیل ہے۔ ایک پاکستان میں دو قانون بنے ہوے ہیں جو کہ آزادکشمیر کہ اساتذہ کے اسکیل اپ گریڈ نہ کرنا سراسر زیادتی ہے۔ جہاں تعلیمی نظام میں بہتری کہ لیے حکومتی عہدیداروں اور بیوروکریسی کی جانب سے بایومیٹرک سسٹم کا نفاذ ،این ٹی ایس کہ ذریعے سلیکشن، پاسنگ مارکس 33 سے 45 فیصد اور پرائمری ٹیچر کہ لیے تعلیمی قابلیت بی اے بی ایڈ ہے ۔ نئی تعلیمی پالیسی پہ عمل تو ہو چکا ہے لیکن اساتذہ کہ اسکیل وہیں کہ وہیں ہیں اس وقت پرائمری ٹیچر اسٹارٹ میں 18000 ماہانہ تنخواہ لیتا ہے جو کہ پنجاب کہ مزدور کی تنخواہ کہ برابر ہے۔

No photo description available.

بعض اساتذہ کرام کا یہ بھی کہنا تھا کہ ہمیں سیاسی آنتقام کا نشانہ بنا کر دور دراز علاقوں میں ٹرانسفر کیا جاتا ہے جس کی وجہ سے اساتذہ کو سفری دشواری کا سامنا ہوتا ہے ۔ اس کہ ساتھ آزاد کشمیر کہ پرائمری اساتذہ کا محکمانہ پروموشن انتہائی کم ہے باقی محکمہ جات میں ایک میٹرک پاس کلرک کسی بھی اضافی تعلیمی قابلیت کہ بغیر اسسٹنٹ ڈائریکٹر کہ عہدے پہ فایز ہو جاتا ہے ۔لیکن محکمہ تعلیم میں ایک پرائمری مدرس ایم اے بی ایڈ ہو کر بھی پروموشن میں انتہائی دشواری کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔ جس کی وجہ سے پڑھے لکھے لوگ ذہنی اضطراب اور مالی پریشانیوں کا شکار ہیں ۔ وزیراعظم عمران خان چیف جسٹس پاکستان اس معاملے کا نوٹس لے کر ازخود اس معاملے کی شفاف انکوائری کروایں تا کہ غفلت برتنے والوں کو کٹہرے میں لایا جاے۔۔۔

اس حوالے سے سکیل اپگریڈشن تحریک کے سرگرم رکن سید فیصل عباس بخاری سے ہماری بات ہوئی ان کا کہنا تھا کہ آزاد کشمیر کہ اساتذہ کسمپرسی کی زندگی بسر کرنے پہ مجبور ہو گئے ۔
تمام اساتذہ ذہنی پریشانی کا شکار ہیں ۔ حکومت اساتذہ کہ تمام معاملات کو جلد از جلد یکسو کرے۔